6

سندھ میں تعلیمی ادارے بند نہ کرنے کا فیصلہ

Hits: 0

کورونا وائرس کے پھیلاو کے حوالے سے سندھ کے وزیر تعلیم سعید غنی کی صدارت میں سندھ کی اسٹیرنگ کمیٹی کا اجلاس ہوا ہے جس میں صوبے بھر میں تعلیمی ادارے بند نہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔اجلاس میں سیکریٹری اسکولز، سیکریٹری کالجز اور تعلیمی بورڈز کے چیئرمین شریک ہوئے۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ تعلیمی اداروں میں ایس او پیز پر مزید سختی سے عمل کیا جائے گا، سندھ میں موسمِ سرما کی تعطیلات بھی نہیں ہوں گی، جو تعلیمی ادارے آن لائن کی طرف جانا چاہیں جا سکتے ہیں۔اجلاس میں 23 نومبر تک کے لیے تمام صوبوں سے مشاورت کے بعد حتمی فیصلہ کیئے جانے پر بھی اتفاق ہوا، تعلیمی اداروں میں کورونا وائرس کی صورتِ حال پر بات چیت کی گئی جبکہ این سی او سی کی تجاویز پر مشاورت بھی کی گئی۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سندھ کے وزیر تعلیم سعید غنی کہتے ہیں کہ وفاق کا موقف ہے کہ 25 نومبر تا 24 دسمبر بچوں کو اسکول کے بجائے گھروں پر تعلیم دی جائے، اس دوران والدین اسکولز میں اساتذہ سے ہفتہ وار ہوم ورک لیں۔انہوں نے بتایا کہ وفاق سرما کی تعطیلات 25 دسمبر 2020 سے 10 جنوری 2021 تک کرنے کا کہہ رہا ہے، کوووڈ کے کیس بڑھ رہے ہیں اس میں کوئی دو رائے نہیں ہے۔سندھ کے وزیرِ تعلیم سعید غنی نے کہا کہ گزشتہ دنوں کے کورونا وائرس کے کیسز کے حوالے سے اعداد و شمار کو دیکھا جائے تو یہ 3 اعشاریہ 7 فیصد تک بھی گئے ہیں۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ اجلاس کا مقصد اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کر کے سندھ کا موقف طے کرنا ہے، چاہتے ہیں کہ سندھ میں تعلیم سے متعلق اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے فیصلے کیئے جائیں۔

@media(min-width: 768px){ .oembed_ltr{ border: 1px solid #e0e0e0!important; width: 90%; padding: 10px 10px 10px 5px!important; display: block; margin: 0 auto; } .oembed_image{ width: 100px; float:right; margin-left: 10px; } .oembed_image .top-center{ height:100px; } .oembed_title{ min-height: 100px; display: block; align-items: center; max-height: 100px; overflow: hidden; } .oembed_title a{ font-size: 20px; line-height: 52px; color:#222; overflow: hidden; padding-right: 10px; } } .top-center { background-position: center top !important; background-size: cover !important; } @media(max-width: 768px){ .oembed_ltr{ border: 1px solid #e0e0e0!important; display: block; align-items: center; width: 100%; padding: 10px 10px 10px 5px!important; } .oembed_image{ width: 90px;float:right;margin-left: 10px; } .oembed_image .top-center{ height: 84px; } .oembed_title{ align-items: center;max-height: 84px;overflow: hidden;min-height: 84px; } .oembed_title a{ font-size: 18px; line-height: 46px; color:#222; overflow: hidden; padding-right: 10px; } }

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں